Choosing The Right Doctor

درست ڈاکٹر کا انتخاب

اپنے یا اپنی فیملی کے علاج کے لیے درست ڈاکٹر کا انتخاب ایک انتہائی اہم مرحلہ اور مسئلہ ہے، لیکن اس کے باوجود دیکھا گیا ہے کہ لوگ اپنے معالج کا انتخاب کرنے میں، جس پر ان کی صحت کا دارومدار ہوتا ہے، کی بہ نسبت اپنی روزمرہ کی اشیاء خریدنے ، ان کا معیار جانچنے اور ان کی قیمت کا بھاؤ تاؤ آج کل فیملیز کے اپنے فزیشن ہوتے ہیں جن کے پاس وہ روزمرہ کے معاملات اور چھوٹے چیک اپ اور بیماریوں کے لیے جاتے ہیں، اور بیماری کے شدید ہونے کی صورت ضرورت پڑنے پر یہ فزیشن انہیں
سپیشلسٹ ڈاکٹروں کے پاس بھیجتےہیں۔
سوال یہ ہے کہ ہم فیملی فزیشن، یا “درست” فیملی فزیشن کا انتخاب کیسے کریں؟ آپ
کیسے اس بات کا تعین کر سکتے ہیں کہ کون سا ڈاکٹر آپ کے لیے صحیح ہے اور جن سپیشلسٹ ڈاکٹرز کے پاس وہ آپ کو بھیج رہا ہے، کیا ان کو معیار اور علاج ایسا ہے کہ آپ کو ان سے علاج کروانا چاہیئے؟ ڈاکٹر کا انتخاب کرنے سے پہلے کچھ چیزیں ایسی ہیں جن کو جاننا آپ کے لیے ضروری ہے۔ کرنے میں زیادہ وقت لگاتے ہیں ۔
Doctor
• دوستوں اور رشتہ داروں سے مشورہ اور تجاویز لیں۔ اگر آپ اپنی رہائش گاہ بدل رہے ہیں یا کسی اور شہر شفٹ ہو رہے ہیں تو اپنے موجودہ فزیشن سے اس بارے میں بات کریں اور اس سے تجاویز لیں۔
• آپ جس جگہ شفٹ ہو رہے ہیں، وہاں پہلے سے رہنے والے لوگوں سے اس بارے میں جاننے کی کوشش کریں۔ بعص اوقات فارمیسی اور میڈیکل سٹور والے بھی اس معاملے میں مددگار ثابت ہو سکتے ہیں لیکن عموماً کئی ڈاکٹرز کا فارمیسی کے ساتھ تعلق ہوتا ہے اس لیے اس معاملے میں آپ ان پر زیادہ بھروسہ نہیں کر سکتے۔
• کیا آپ کا ڈاکٹر لائسنس یافتہ ہے؟ اس بارے میں معلومات کے لیے آپ پاکستان میڈیکل اینڈ ڈینٹل کونسل PMDC سے رابطہ کر کے چیک کر سکتے ہیں۔
• اس بات کو یقینی بنائیں کہ آپ کا ڈاکٹر اور آپ کا سپیشلسٹ ڈاکٹر دونوں حقیقتاً آپ کے لیے درست تشخیص کر سکتے ہیں۔کئی مریض اس بات کو جان کر ششدر رہ جاتے ہیں کہ وہ غلط سپیشلسٹ کا انتخاب کرنے کی وجہ سے ایک بیماری سے دوسری کئی پیچیدہ بیماریوں میں مبتلا ہو گئے ہیں۔ایسا ڈاکٹر یا سپیشلسٹ جو کہ جسم کی صرف ایک علامت پر اپنی توجہ مرکوز کرتے ہوئے بیماری کی تشخیص میں شامل باقی جسمانی علامات کو نظر انداز کر دے، وہ ڈاکٹر ہرگز آپ کے لیے درست نہیں ہے۔کیونکہ ایسا کرنے سے آپ کے درست علاج ، درست تشخیص اور درست دواؤں کے انتخاب میں غلطی ہو سکتی ہے جو کہ بعض کیسز میں جان لیوا بھی ثابت ہو سکتی ہے۔
• اس بات کو یقینی بنائیں کہ آپ کو اس بارے میں تمام معلومات حاصل ہوں کہ آپ کے ڈاکٹر نے کہاں سے اپنی ڈگری حاصل کی ہے۔ انہوں نے اپنی سپیشلائزیشن کہاں سے کی؟ انہوں نے اپنی ہاؤس جاب کس ہسپتال میں کی؟ کیا وہ رجسٹرڈ میڈیکل پریکٹیشنر ہے؟ کیا وہ جدید تحقیق، دواؤں اور ان کے سائیڈ ایفیکٹس سے بخوبی آگاہ ہے؟ اپنے ڈاکٹر کے تعلیمی اور تربیتی پس منظر سے آگاہ ہونا آپ کو
عطائی ڈاکٹروں اور ناتجربہ کار غلط ہاتھوں میں جانے سے بچا سکتا ہے۔
• ڈاکٹر کے کلینک یا ہسپتال کی جائے وقوعہ بھی ڈاکٹر کے انتخاب میں ایک اہم عنصر ہے، کیونکہ اگر
ڈاکٹر کے کلینک یا ہسپتال تک پہنچنا مشکل اور وقت طلب ہے تو پھر یہ ایک مسئلہ بن سکتا ہے۔
• ڈاکٹر کی جنس بھی بعض اوقات ڈاکٹر کے انتخاب میں اہم کردار ادا کرتی ہے ، خاص کر مشرقی معاشروں میں جہاں خواتین عموماً خواتین ڈاکٹروں کو ترجیح دیتی ہیں، خصوصاً گائنی اور زنانہ مخصوص بیماریوں کے لیے۔ اور مرد حضرات مردانہ مسائل کے لیے مرد ڈاکٹر کو ترجیح دیتے ہیں، لیکن یہ تفریق عام بیماریوں کے علاج کے لیے ڈاکٹر کے انتخاب میں رکاوٹ بنتی نہیں دیکھی گئی۔
• بعض افراد کے نزدیک ڈاکٹر کی عمر بھی ان کے انتخاب میں ایک اہم عنصر ہے، کچھ لوگ بڑی عمر کے
ڈاکٹرز کے پاس جانا زیادہ محفوظ سمجھتے ہیں کیونکہ ان کے نزدیک ڈاکٹر کا تجربہ زیادہ اہم ہوتا ہے، جبکہ کچھ لوگ نوجوان اور نئے ڈاکٹرز کے پاس جانا بہتر سمجھتے ہیں کیونکہ ان کے نزدیک جدید تعلیم اور تحقیق تجربہ پر فوقیت رکھتی ہے۔ لیکن اگر اسے دور اندیشی کی نظر سے دیکھا جائے تو ہمیشہ ایسے ڈاکٹر حضرات کا چناؤ کریں جو بیماری کی تشخیص سے لے کر دواوں کی تجویز تک بیماری اور مریض کی جسمانی کیفیات کے ہر پہلو کو نظر میں رکھتے ہوئے فیصلہ کرتا ہو، جو نئی تحقیق اور دواؤں سے بھی آگاہ ہو۔
Doctor
• بعض علاقو ں میں ڈاکٹر کی زبان بھی مریض اور ڈاکٹر کے درمیان مسئلہ بن جاتی ہے۔ اگر ڈاکٹر علاقے کی زبان سے واقف نہیں ہے تو ممکن ہے کہ وہ بیماری کی غلط تشخیص کر بیٹھے۔ اس صورت میں ڈاکٹر یا مریض دونوں میں سے ایک کے ساتھ ایک ایسا شخص ہونا لازمی ہے جو ڈاکٹر کو مریض اور مرض کی علامات صحیح طور پر سمجھا سکے۔ یہ یاد رکھنا اہم ہے کہ نہ ہی زبان اور نہ ہی ثقافت آپ کی دیکھ بھال کرنے کے لئے ڈاکٹر کی صلاحیت پر اثر انداز ہوتی ہے ، لیکن یہ آپس مںا ایک دوسرے کے ساتھ مؤثر طریقے سے بات چیت کرنے کی صلاحیت کو متاثر کرسکتی ہے۔اس بات کو تسلم کرنا ضروری ہے کہ بہترین ڈاکٹرعلاقائی زبان بولے ہوں اور ثقافت سے آگاہ ہوں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: